El viernes 10 de noviembre, 250 personas se aglomeraron en la Casa Museo León Trotsky en Coyoacán, Ciudad de México, para asistir a una reunión sobre el tema de la exitosa novela acerca del asesinato de Trotsky, El hombre que amaba a los perros, del célebre escritor cubano Leonardo Padura. La reunión fue excepcional.

Lo sciopero generale in Catalogna contro la repressione, l’introduzione dell’articolo 155 e per il rilascio dei prigionieri politici è riuscito a paralizzare il paese. Nonostante tutte le difficoltà, lo sciopero ha avuto un grande seguito nel settore educativo, nel settore pubblico e nei media, ma è stato quasi insignificante nell’industria e nei trasporti. Tuttavia, la giornata è stata caratterizzata da blocchi stradali e dei trasporti organizzati dai Comitati per la Difesa della Repubblica (CDR) e da manifestazioni di massa in tutte le città.

100 años atrás en Rusia, en medio de lo que fue la primera gran carnicería humana del siglo XX –la Primera Guerra Mundial-, el pueblo ruso, el Partido Bolchevique y su dirección, especialmente Lenin y Trotsky, tomaron el poder y derrumbaron el imperio de los Zares. Si omitimos el breve periodo en que los trabajadores parisinos que gloriosamente se organizaron y tomaron el poder en los tres meses que duró la comuna de París, en 1871; se demostró, por la vía de los hechos, que la clase obrera era capaz, no solo de derribar la vieja oligarquía zarista sino hacer a un lado a la cobarde burguesía rusa y sus partidos y llegar de forma pacífica al poder.

Hoy 7 de noviembre, a las 18 horas, en la ciudad de México, en el auditorio de la casa museo León Trotsky, se ha celebrado la reunión en conmemoración de los 100 años de la gran revolución de octubre, con cerca de 100 asistentes. El tema de la charla fue; México y Rusia dos revoluciones del siglo XX. Como invitados para hablar en la reunión estaban: Cuauhtémoc Cárdenas; el embajador de la Federación Rusa en México, Eduard R. Malayan; el nieto de León Trotsky, Esteban Volkov y el dirigente de la Corriente Marxista Internacional Alan Woods.

L'Estat espanyol pretén aparèixer com el vencedor a la batalla inacabada contra l'independentisme català, però el fet més significatiu del succeït aquests dos darrers mesos ha estat el desenvolupament del major moviment de desobediència civil que hi ha hagut mai a l'Estat espanyol en 40 anys. Aquest moviment ha estat protagonitzat per milions de persones comunes i corrents, ha tingut característiques revolucionàries i ha posat en escac el règim del 78 i al seu aparell d'estat heretat del franquisme. Les lliçons a treure d'aquest conflicte, el qual està lluny d'haver conclòs, són precioses; i ajudaran a forjar la consciència revolucionària de la nova generació, a Catalunya i a tot l'Estat.

انقلاب روس کے سو سال پر پوری دنیا میں اس عظیم انقلاب کی یاد میں تقریبات منعقد کی جا رہی ہیں۔ دوسری جانب محنت کش طبقے کی اس میراث پر سرمایہ داروں اور ان کے گماشتوں کی جانب سے حملوں کا نہ ختم ہونے والا سلسلہ بھی پوری شدت کے ساتھ جاری ہے۔ بہت سی نئی کتابیں اور مضامین شائع کیے جارہے ہیں جن میں اس انقلاب کے واقعات کو مسخ کرنے کی کوشش کی جاتی ہے اور اس پر ہر قسم کے غلیظ الزامات لگائے جاتے ہیں۔ آج پوری دنیا میں سرمایہ داری کا مکمل غلبہ ہے لیکن اس کے باوجود انسانیت سسک رہی ہے اور آبادی کا وسیع ترین حصہ غربت، ذلت اور محرومی کی اتھاہ گہرائیوں میں زندگی گزار رہا ہے۔ ہر جانب جنگیں، خانہ جنگیاں اور خونریزی نظر آتی ہے جہاں بے گناہوں کا خون پانی کی طرح بہایا جا رہا ہے۔ لیکن اس کے باوجود حکمران طبقات اور ان کے دلال دانشور سرمایہ داری کو بہترین نظام بنا کر پیش کرنے کی کوشش کرتے ہیں جبکہ سوشلزم کے عظیم نظریات کے خلاف جھوٹا پراپیگنڈہ کرتے ہیں۔ ان کے نزدیک یہ ایک انقلاب نہیں تھا بلکہ ایک سازش تھی جس میں لینن نے فوج کے کچھ حصوں کو ساتھ ملا کر روس کے بادشاہ زارِ روس کا تختہ الٹ دیا تھا اور اپنی حکمرانی قائم کر دی تھی۔ اسی طرح لینن اور بالشویک پارٹی پر ڈکٹیٹر شپ قائم کرنے کا بھی الزام لگایا جاتا ہے جبکہ یہ بھی کہا جاتا تھا کہ یہ سب درحقیقت ایک جرمن سازش تھی۔ بہتانوں اور الزام تراشیوں کا ایک نہ ختم ہونے والا سلسلہ ہے جس میں اس انقلاب کے حقیقی واقعات اور محنت کش طبقے کی لازوال قربانیوں اور جدوجہد کو تاریخ کے صفحات سے مٹانے کی کوشش کی جاتی ہے۔

لم يسبق لأي حدث آخر في تاريخ البشرية أن تعرض لما تعرضت له الثورة الروسية من التشويهات والافتراءات والأكاذيب. وأولئك الذين يشهدون المعاملة التي يتلقاها اليوم جيريمي كوربين على يد الصحافة البريطانية يفهمون نكهة حقد الطبقة السائدة. هوغو تشافيز والثورة الفنزويلية حظيا بدورهما بنفس الاهتمام الخاص في الفترة الأخيرة. لكن ليس هناك من حدث استحق كراهية الطبقة الحاكمة مثل الثورة البلشفية عام 1917، لأنه آنذاك قام العبيد لأول مرة بالإطاحة بالنظام القديم والبدء في بناء مجتمع جديد دون الحاجة إلى رب أو سيد.